الیکشن میں ٹیسٹ ٹیوب بے بیز پیدا کرنے کے سنگین نتائج ہوں گے

شیئر کریں

سینیٹ اجلاس میں ارکان نے انتخابات کی شفافیت پر شدید تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے الیکشن کمیشن اور نگران حکومت کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا ہے، جبکہ نگران وزیراعلیٰ پنجاب حسن عسکری سے مستعفیٰ ہونے کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

پارلیمنٹ کے ایوان بالا کے اجلاس میں مسلم لیگ (ن) اور پیپلز پارٹی کے سینیٹرز الیکشن کمیشن اور نگراں حکومت پر برس پڑے۔ رضا ربانی نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ ن لیگ کے کارکنوں کو گرفتار کیا جارہا ہے، الیکشن شفاف کیسے ہوں گے، فوجی جوانوں کو پولنگ سٹیشن کے اندر کیوں تعینات کیا جارہا ہے، اگر انتخابات میں دھاندلی ہوئی تو سنگین نتائج بھگتنا پڑیں گے، الیکشن میں ٹیسٹ ٹیوب بے بیز پیدا کرنے کوشش کی گئی تو ملک پر برے اثرات پڑیں گے۔

رضا ربانی نے کہا کہ کیا الیکشن کمیشن کو یہ بات نظر نہیں آ رہی کہ دو بڑی جماعتوں کو ٹارگٹ کیا جا رہا ہے، امیدواروں کو بلایا جا رہا ہے کہ انتخابی مہم چھوڑیں نیب آفس آکر بیٹھ جائیں۔ بعض اخبارات کو مخصوص علاقوں میں تقسیم نہیں کیا جارہا کیا الیکشن کمیشن کو یہ نظر نہیں آ رہا، پاکستانی قوم الیکشن کمیشن سے جواب مانگتی ہے، نگراں حکومت اور الیکشن کمیشن آئینی ذمہ داری پوری کرنے میں ناکام ہو چکے، شاہد خاقان عباسی کی کارنر میٹنگ پر بھی پتھراؤ ہوا، الیکشن کمیشن ایسے خاموش رہا جیسے اس کو کہیں سے کچھ کہا جا رہا ہو۔

رضا ربانی کا کہنا تھا کہ الیکشن کمیشن نے بینک کے عملے کو کس بنیاد پر پولنگ اسٹاف تعینات کیا ؟ مسلح افواج کو طلب کرنے کا ضابطہ اخلاق یا قواعد و ضوابط کیا ہیں؟، الیکشن کمیشن پہلے کہتا رہا کہ فوجی جوان پولنگ اسٹاف کے باہر ہی تعینات ہوں گے، تو اب انہیں فوجی جوانوں کو پولنگ اسٹیشن کے اندر تعینات کرنے کی فیصلے کی کیا وجہ ہے؟ کس شق کے تحت الیکشن کمیشن نے کالعدم تنظیموں اور فورتھ شیڈول پر موجود لوگوں کو انتخاب لڑنے کی اجازت دی ؟، وہ لوگ جن کے اوپر مقدمات ہیں کیا انکا ریکارڈ الیکشن کمیشن نے منگوایا تھا؟۔

اپوزیشن لیڈر شیری رحمان نے کہا کہ حالات بہتر نظر نہیں ہو رہے، انتخابات اور ملک دو راہے پر کھڑے ہیں، آپ مسلح تنظیموں کو مین سٹریم میں لاکر پاکستان میں تفریق پیدا کر رہے ہیں، جب وہ لوگ ایوان میں آگئے تو یہاں کیا بحث ہوا کرے گی؟ کالعدم تنظیمیں ایوان میں آگئیں تو وہ لوگ مین سٹریم میں آجائیں گے، اگر وہ لوگ یہاں آگئے تو پھر یہاں کس کو سانس لینے کی اجازت ہوگی؟ نگراں صوبائی وزیر داخلہ پنجاب کو فوری استعفی دے دینا چاہئے۔

ن لیگ کے سینیٹر پرویز رشید کا کہنا تھا کہ نگران حکومت جواب دے کسی کے ساتھ لاڈلے اور کسی کے ساتھ سوتیلوں والا سلوک کیا جارہا ہے، کل ہی احتساب عدالت نے عمران خان کو ہیلی کاپٹر کیس میں استثنیٰ دیا، اگر لاڈلے کو استثنیٰ مل سکتا ہے تو حنیف عباسی کو کیوں نہیں۔ نگراں وزیراعلیٰ پنجاب نے بھارتی اخبار میں پیش گوئی کی کہ پنجاب میں تحریک انصاف کی نشستیں بڑھ جائیں گی، حسن عسکری کی اس پر استعفیٰ دینا چاہئے۔

راجہ ظفرالحق نے کہا کہ نگران حکومت الیکشن میں فریق ہے، جو خاص نتیجہ حاصل کرنے کی کوشش کررہی ہے۔ نگراں حکومت میں عقل کی خاصی کمی ہے، وہ نوازشریف کی آمد پر تشدد کے واقعات میں کیوں ملوث ہوئی؟


شیئر کریں