قومی ہیرو سپاہی مقبول حسین کی نماز جنازہ

شیئر کریں

1965 کی جن میں قیدی بننے والے غازی سپاہی مقبول حسین کی نماز جنازہ آج اٹک / چکلالہ میں ادا کی جائے گی۔ وہ کئی دنوں سے سی ایم ایچ اٹک میں زیر علاج تھے جہاں گزشتہ روز وہ خالق حقیقی سے جا ملے۔

مرحوم سپاہی مقبول حسین نے 1960 میں پاک فوج میں شمولیت اختیار کیا۔ 1965 کی جنگ کے دوران جنگی قیدی بنے تھے، اس وقت کے کیپٹن شیر کی کمان میں سپاہی مقبول حسین وائر لیس سیٹ پر اپنے فرائض کی ادائیگی میں مصروف تھے کہ سرحد پار سے ہونے والے حملے میں شدید زخمی ہوئے اور انہیں زخمی حالت میں گرفتار کیا گیا۔ 40 سال بھارتی تشدد اور صعوبتیں برداشت کرنے والے اس جواں ہمت پاکستانی کو 2005 میں رہائی ملی۔ آزاد کشمیر رجمنٹ سے تعلق رکھنے والے سپاہی مقبول حسین پر بھارتی جیلوں میں انسانیت سوز مظالم کئے گئے اور زبان بھی کاٹی گئی، یہی وجہ تھی کہ  رہا ہونے کے بعد یہ اپنا گھر اور دیگر معلومات بھی نہ دے سکے۔

1965 کی جنگ کے اس ہیرو کی نمازجنازہ آج اٹک میں ادا کی جائے گی، جب کہ ان کی دوسری نماز جنازہ دن ڈھائی بجے چکلالہ گیریژن میں ادا کی جائے گی۔ انہیں مکمل فوجی اعزاز کے ساتھ ان کے آبائی گاؤں ناڑیاں تراڑکھل میں سپرد خاک کیا جائے گا۔


شیئر کریں