پاک فوج کا 20 ہزار فٹ کی بلندی پر کامیاب آپریشن، روسی کوہ پیما کو بچالیا

شیئر کریں

پاک فوج نے 20 پزار فٹ کی بلندی پر کامیاب ریسکیو آپریشن کرتے ہوئے گلیشیئر میں پھنسنے والے روسی کوہِ پیما الیگزینڈر گوبیافو کو بحفاظت اتار لیا۔ پاک فوج کے شعبہ تعلقاتِ عامہ کی جانب سے جاری کئے گئے ایک بیان کے مطابق روسی کوہ پیما شمالی علاقہ جات میں بیافو گلیشیئر میں 20 ہزار 6 سو 50 فٹ بلند چوٹی لوٹک پر پھنس گئے تھے۔

آئی ایس پی آر کے مطابق آرمی ایوی ایشن کے پائلیٹس نے نامساعد حالات کے باوجود غیر ملکی کوہِ پیما کو بچانے کے لیے 31 جولائی کی صبح کامیاب ریسکیو آپریشن کرکے انہیں باحفاظت زمین پر اتار لیا۔ پریس ریلیز میں بتایا گیا کہ یہ پاکستان کی تاریخ میں پہلی مرتبہ اتنی بلندی پر ریسکیو آپریشن کامیابی سے انجام پایا ہے۔ کوہِ پیما الیگزینڈر گوبیافو کو ضروری علاج کے لیے کمبائنڈ ملٹری ہسپتال (سی ایم ایچ) اسکردو منتقل کیا گیا جہاں ان کا علاج جاری ہے۔

آئی ایس پی آر کی جانب سے جاری ہونے والے بیان میں بتایا گیا کہ غیر ملکی کوہِ پیما 25 جولائی سے لوٹک کی چوٹی پر پھنسا ہوا تھا جبکہ ان کے پاس کھانے پینے کا سامان بھی 3 روز پہلے ہی ختم ہوگیا تھا۔

پاک آرمی کا ہیلی کاپٹر آپریشن میں مصروف— فوٹو، آئی ایس پی آر
پاک آرمی کا ہیلی کاپٹر آپریشن میں مصروف— فوٹو، آئی ایس پی آر

پریس ریلیز میں بتایا گیا کہ کوہِ پیما کو بچانے کے لیے اس سے قبل 26 سے 30 جولائی کے درمیان 7 کوششیں کی گئیں تھیں تاہم، شدید برف اور بادل کی وجہ سے انہیں تلاش کرنا ممکن نہیں ہوسکتا تھا۔

پاکستان کے شمالی علاقہ جات میں موجود دنیا کی بلند و بالا چوٹیوں کو سر کرنے کے لیے دنیا بھر سے کوہِ پیما یہاں آتے ہیں، جن میں سے کچھ خراب موسم کی وجہ سے چوٹی کو سر نہیں کر پاتے یا پھر یہاں پھنس جاتے ہیں اور اپنی جان گنوادیتے ہیں۔ واضح رہے کہ پاک فوج نے حال ہی میں ان چوٹیوں کو سر کرنے کی مہم کے دوران پھنس جانے والے کوہِ پیما کو کامیاب آپریشن کے ذریعے بچایا ہے۔

رواں برس 29 جون کو پاک فوج کے ہیلی کاپٹروں نے ہنزہ میں اولتر چوٹی سر کرنے کے دوران حادثے کا شکار ہونے والے غیر ملکی کوہ پیماؤں کا سراغ لگاتے ہوئے انہیں بچالیا تھا، تاہم ایک کوہِ پیما ریسکیو آپریشن سے قبل ہی ہلاک ہوگیا تھا۔


شیئر کریں