یکہ توت دہشت گردی: 10 شہدا سپرد خاک، پشاور میں سوگ

شیئر کریں

پشاور کے علاقے یکہ توت میں گزشتہ رات ہونے والے خودکش حملے کے بعد شہر کی فضا سوگوار ہے جبکہ حملے میں شہید ہونے والے 20 میں سے 10 افراد کی اجتماعی نماز جنازہ کے بعد انہیں سپرد خاک کردیا گیا۔ حملے میں شہید ہونے والے اے این پی کے رہنما ہارون بلور کی نماز جنازہ شام 5 بجے ادا کی جائےگی جس میں اے این پی قیادت کے علاوہ دیگر سیاسی جماعتوں کے رہنما بھی شریک ہوں گے۔

گزشتہ رات پشاور کے علاقے یکہ توت میں خودکش حملہ آور نے عوامی نیشنل پارٹی کی کارنر میٹنگ کے دوران خود کو دھماکے سے اڑالیا، جس کے نتیجے میں اے این پی کے امیدوار ہارون بلور سمیت 20 افراد شہید ہوگئے۔

یکہ توت حملے کے بعد عوامی نیشنل پارٹی کی جانب سے تین روزہ سوگ کا اعلان کیا گیا ہے، جبکہ تحریک انصاف نے خیبرپختونخوا میں ایک روزہ سوگ کا اعلان کرتے ہوئے اپنی انتخابی مہم بھی روک دی ہے۔ خیبرپختونخوا بار کونسل نے بھی واقعے پر تین روزہ سوگ کا اعلان کرتے ہوئے آج عدالتی کارروائی کا بائیکاٹ کردیا ہے۔ انجمن تاجران کے سوگ کے اعلان پر شہر میں کاروباری سرگرمیاں معطل ہیں جس کے باعث چھوٹے بڑے بازار بند ہیں۔

خود کش حملے کا مقدمہ تھانہ سی ٹی ڈی میں درج کیا گیا ہے، مقدمہ ایس ایچ او تھانہ آغا میر جانی شاہ واجد علی کی مدعی میں درج کیا گیا جس میں انسداد دہشت گردی ایکٹ کی دفعات بھی شامل کی گئی ہیں۔ سی سی پی او پشاور قاضی جمیل نے ڈی آئی جی سی ٹی ڈی کی سربراہی میں تحقیقاتی کمیٹی تشکیل دے دی ہے جو 7 روز میں اپنی رپورٹ پیش کرے گی۔

دہشت گردی کے اس واقعہ کے بعد پولیس نے پشاور میں سیکیورٹی سخت کردی ہے، شہر میں ناکوں کی تعداد بڑھا دی گئی ہے، شہر کے داخلی اور خارجی راستوں پر تلاشی کےبعد لوگوں کو داخلے کی اجازت دی جارہی ہے۔


شیئر کریں