ڈینگی کے علاج میں اہم پیش رفت

ڈینگی کے علاج میں اہم پیش رفت

سائنس ڈیسک…

دنیا بھر میں ہر سال تقربیاً چار کروڑ افراد ڈینگی کے مرض میں مبتلا ہوتے ہیں اور لگ بھگ ایک کروڑ لوگوں کو مرض کی شديد علامات کے باعث ہسپتال میں داخل ہونا پڑتا ہے۔

یہ جان لیوا بخار ایک مخصوص مچھر کے کاٹنے سے پھیلتا ہے جو ڈینگی کا وائرس ایک انسان سے دوسرے انسان میں منتقل کرنے کا سبب بنتا ہے۔

ڈینگی وائرس کی چار اقسام ہیں۔ اس مرض کی علامتوں میں بخار، بدن میں درد اور بے چینی شامل ہے۔ پہلی بار وائرس کے حملے میں اس مرض کی علامتیں عموماً شديد نہیں ہوتیں۔ لیکن دوسری بار ڈینگی کا حملہ جان لیوا ثابت ہو سکتا ہے کیونکہ مرض کی شدت میں جسم سے خون بہنا شروع ہو سکتا ہے اور موت واقع ہو سکتی ہے۔ ایسا کیوں ہوتا ہے؟

نیویارک کی راک فیلر یونیورسٹی میں مالیکولر جنیٹکس کے شعبے کے سربراہ جیفری ریوٹچ کی قیادت میں کام کرنے والے سائنس دانوں کو پتا چلا ہے کہ جب ڈینگی کا وائرس دوسری بار کسی انسان پر حملہ کرتا ہے تو وہ ان خلیوں کو نقصان پہنچاتا ہے جو بیماریوں کے خلاف لڑنے والا معدافعتی نظام تشکیل دیتے ہیں۔

وہ کہتے ہیں کہ ڈینگی سے متاثرہ خلیوں کے سبب جسم کا معدافعتی نظام وائرس کی ساخت کو درست طور پر شناخت نہیں کر پاتا اور اسے روکنے کی بجائے مرض بڑھانے میں اس کی مدد کرنے لگتا ہے۔ یہ اس لیے ہوتا ہے کہ معدافعتی خلیے وائرس کو دوست سمجھتے ہوئے صحت مند خلیوں پر حملے میں اس کا ساتھ دینے لگتے ہیں۔

راک فیلر یونیورسٹی میں مالیکولر جنیٹکس کے شعبے میں کام کرنے والی سائنس دانوں کی ٹیم بھٹک جانے والی ان  اینٹی باڈیز کو شناخت کرنے میں کامیاب ہو گئی ہے جو ڈینگی کے شديد حملے میں جسم سے خون بہنے کا سبب بنتی ہیں۔

سائنسی جریدے سائنس میں شائع ہونے والی ان سائنس دانوں کی تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ اس دریافت سے مرض کی تشخیص آسان ہوگئی ہے اور پہلے سے یہ پتا چلانا ممکن ہو گیا ہے کہ آیا بخار میں مبتلا مریض واقعتا خطرے میں ہے۔ جس سے اس کے علاج پر خصوصي توجہ دی جا سکتی ہے اور اس کے جسم میں خون اور پانی کی مقدار پر کنٹرول کیا جاسکتا ہے۔

جیفری ریوٹچ کہتے ہیں یہ دریافت ہونے کے بعد کہ ڈینگی کے حملے میں جسم سے خون کے اخراج کا سبب کیا ہے، اس کی روک تھام کے لیے ایک مؤثر ویکسین بنانے کی راہ ہموار ہوگئی ہے۔

ریوٹچ کا کہنا ہے کہ ڈینگی وائرس، زکا وائرس کے ہی خاندان سے تعلق رکھتا ہے۔ زکا وائرس بچوں میں پیدائشی نقائص اور پیچیدگیوں کا سبب بنتا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ ڈینگی وائرس کی مؤثر دوا دریافت ہونے سے زکا وائرس کے علاج کی راہ بھی ہموار ہو سکتی ہے۔