کالے کرتوت، مبلغ725 روپے

احمدنور…

پنجاب حکومت نے تمام تعلیمی اداروں اور پبلک لائبریریز کو حکم دیا ہے کہ وہ وزیراعظم کی داستان حیات پرمبنی کتاب کو خریدیں جس کی قیمت 725 روپے مقرر کی گئی ہے۔

گزشتہ دنوں پانامہ لیکس کی سماعت کے دوران سپریم کورٹ کے ایک جج نے کہا تھا کہ وزیراعظم نواز شریف کی زندگی کی کتاب کے کچھ صفحے غائب ہیں۔خواجہ سعد رفیق اس بات پر بہت آگ بگولا ہوئے تھے اور شاید یہی وجہ ہے کہ نون لیگ نے ایک مکمل کتاب شائع کر دی ہے تاکہ قوم خود دیکھ لے کہ میاں صاحب کی زندگی کے تمام صفحے اپنی جگہ موجود ہیں۔

کتاب میں میاں صاحب کے پیدا ہونے سے لے کر کی داستان بیان کی گئی ہے۔جنرل مشرف کی اڈیالہ جیل میں میاں صاحب کے ساتھ کی گئی بدتمیزیوں کا احوال بھی اس کتاب کا حصہ بنایا گیا ہے۔ اس کے علاوہ جنرل مشرف کے ساتھ ڈیل کرکے تمام پیسہ باہر لے جانے والے عظیم سانحے کا بھی مختصر جائزہ لیا گیا ہے۔

جلاوطنی میںآپ کے والدمحترم کی وفات اور خاندان کے دیگر ممبران کو پیش آنے والی مشکلات کا ذکر بھی موجود ہے۔

2002 کے الیکشن میں ان کی وطن واپسی کی کوشش ،ڈیپورٹیشن اور پھر 25 نومبر2007 کو این ۔آر۔او کے تحت دوبارہ وطن واپسی کا تمام احوال آپ صرف 725 روپے میں جان سکتے ہیں۔

وزیراعظم کی زندگی کے تمام پہلوں پر روشنی بکھیرتی اس کتاب کی اشاعت کے بعدتو دشمنوں کے منہ بند ہو جانے چاہیں تھے، لیکن ان کی اب بھی تسلی نہیں ہو رہی ہے۔وہ اب بھی کہہ رہے ہیں کہ اس کتاب میں سے چندصفحے ہی نہیں بلکہ پانامہ کیس نام کا ایک پورا باب ہی غائب ہے ۔

عمران خان حسب عادت جیلس ہو رہے ہیں۔ حکومت نے کتاب کا نام رکھا ہے میاں محمد نواز شریف داستان حیات اور وہ کہہ رہے ہیں کہ کتاب کا نام ہو نا چاہیئے تھا ثبوت چھوڑے بغیر اربوں روپے کیسے لوٹے جائیں۔

خان صاحب کا فرمانا ہے کہ کتنی شرمناک بات ہے کہ حکومت نواز شریف کی کتاب کوبچوں پر مسلط کررہی ہے۔بندہ پوچھے کہ بھئی آپ اپنے بچوں کو یہ کتاب نہ پڑھائیں قوم کے بچوں کو تو پڑھنے دیں تاکہ ان کے علم میں اضافہ ہو سکے۔

شایدخان صاحب کو پتہ نہیں ہے کہ انہیں اس بات کا خمیازہ بھگتنا پڑے گا۔تھوڑی دیر میں میاں صاحب کے وفادار ساتھی دانیال عزیز، طلال چوہدری اورخواجہ سعد رفیق وغیرہ میڈیا پر آ جائیں گے اور لوگوں کو بتادیں گے کہ عمران خان قوم کے بچوں کا مستقبل تباہ کر نا چاہتا ہے۔انہیں ایک بہت بڑی حقیقت سے دور کر نا چاہتا ہے۔

دوسری طرف حکومت مخالف میڈیائی عناصر حکومت کے خلاف پراپیگنڈہ کر رہے ہیں تاکہ وہ ملک کو ترقی کے راستوں پر نہ پہنچا سکے اورقوم کو ایک روشن پاکستان نہ دے سکے۔

جو لوگ یہ کہہ رہے پاکستان کو نوازشریف نہیں بلکہ چین اپنے تجارتی منصوبے سی پیک کو چلانے کے لئے روشن کر رہا ہے اور نون لیگ آئندہ الیکشن میںاس کا کریڈٹ لے جائے گی ،سراسر غلط کہہ رہے ہیں۔

نون لیگ کے اپنے ایم این ایز سمیت جو لوگ یہ کہہ رہے ہیں کہ حکومت کاروباری طبقے کی دوست ہے اور اس نے کسان کو تباہ و برباد کر دیا ہے، پراپیگنڈہ کر رہے ہیں ۔

اور وہ لوگ جو کہتے ہیں کہ ملک کے لوگوں کو سڑکوں اور پلوںکے ساتھ ساتھ جنگی بنیادوںپراچھی صحت اور معیاری تعلیم کی ضرورت ہے، بکواس کرتے ہیں۔

آپ جب وزیراعظم کی داستان حیات کا مطالعہ کریں گے تو دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہو جائے گا کہ انہوں نے کس طرح سے پاکستان کی خدمت کی ۔اگر دودھ اور پانی مکس ہوگیا تو یہ سراسر آپ کی اپنی غلطی ہوگی۔حکومت اس کی ذمہ دار نہ ہوگی۔